بھارت کی پاکستان سے تعلیم دشمنی۔عالمی ماہرین کا احتجاج

0
386

بھارتی وزارت خارجہ کی جانب سے پاکستانی تعلیمی اداروں کو سیمینار میں شرکت کے لیے ویزا نہ جاری کرنے پر دنیا کے دیگر بڑے تعلیمی اداروں کے ماہرین تعلیم کی جانب سے احتجاج کیا جارہا ہے۔

بھارتی اخبار انڈین ایکسپریس نے رپورٹ کی ہے کہ دنیا کے مایہ ناز تعلیمی ادارے ہارورڈ ، ییل اور پرسٹن سے تعلق رکھنے والے معلمین نے ایک قرار داد پر اتفاق کیا ہے جس کےتحت اس طرح کے ممالک میں اب کانفرنسز کا انعقاد ہی نہیں کیا جائے گا جو ویزے کےاجرا میں رکاوٹ ڈالتے ہیں۔

نئی دہلی میں ایسوسی ایشن فور ایشیئن اسٹڈیز اور اشوکا یونیورسٹی کے تعاون سے کانفرنس کا انعقاد کیا گیا تھا جس میں شرکت کے لیے پاکستان سے آنے والے مندوبین پر بھارت نے پابندی لگادی تھی۔

ایسوسی ایشن فار ایشیئن اسٹدیز کی جانب سے 2014 سے ’اے اے ایس ان ایشیاء‘ کے نام سے سالانہ کانفرنس کا انعقاد کیا جاتا ہے، اس سے پیشتر یہ کانفرنس سنگاپور، جاپان تائیوان اور جنوبی کوریا میں منعقد کی گئی تھی۔

اس سال کے لیے کانفرنس کا مقام نئی دہلی کو چنا گیا جہاں انڈیا ہیبیٹیٹ سینٹر میں 5 سے 8 جولائی تک اس حوالے سے تقریبات کا انعقاد کیا جانا تھا۔

کانفرنس میں پاکستانی مندوبین پر پابندی کے بعد تقریباً 80 کے قریب معلمین نے احتجاجی اجلاس میں شرکت کی جس میں کانفرنس کے مقام پر ہی ایک ہال کرایے پر لینے کے لیے فنڈ بھی اکٹے کیے گئے تا کہ پابندی کا شکار ہونے والے افراد اس میں انٹرنیٹ کے ذریعے شرکت کرسکیں۔

اس ضمن میں دی گریجویٹ سینٹر، سی یو این وائی سے تعلق رکھنے والے ایک ماہر تعلیم سلمان حسین کا کہنا تھا کہ پاکستان سے تعلق ہونے کی بنا پر بھارت نے ویزے کے اجرا سے انکار کردیا جس کے بارے میں انہیں ایسوسی ایشن نے آگاہ کیا، اس پابندی کا شکار وہ افراد بھی ہیں جو پاکستانی ہونے کے ساتھ دوہری شہریت بھی رکھتے ہیں۔

اس حوالےسے ہونے والے احتجاجی اجلاس میں ماہرین تعلیم کی جانب سے 4 قرار داد منظور کی گئیں جس میں اس بات پر بھی اتفاق کیا گیا کہ آئندہ ایسوسی ایشن مستقبل کیں ایسے کسی ملک میں کانفرنس منعقد نہیں کرے گی جو سرکاری یا غیر سرکاری پالیسی کے تحت کسی کی قومیت کی بنیادپر ویزے جاری کرنے سے انکار کردے۔

تاہم اس حوالے سے آزاد محقق سنجنی مکھرجی جو احتجاجی اجلاس کا حصہ تھے کا کہنا تھا کہ اس بارے میں حتمی فیصلہ نہیں کیا جاسکا۔

واضح رہے کہ رواں برس 19 فروری کو بھارتی وزارت داخلہ کی جانب سے اشوکا یونیورسٹی کو ایک خط ارسال کیا گیا جس میں منتظمین کو کہا گیا تھا کہ وہ اس کانفرنس میں پاکستانی ماہرین تعلیم کو مدوعو نہیں کریں۔

جاری کردہ مراسلے میں مزید کہا گیا تھا کہ وزارت کو سیاسی زاویہ سے پاکستانیوں کئ علاوہ غیر ملکی شرکاء کی تقریب میں شرکت پر کوئی اعتراض نہیں۔

اس سلسلے میں متعدد ماہرین نے ایسوسی ایشن فار ایشیئن اسٹدیز کو پابندی سے بروقت آگاہ نہ کرنے پر تنقید کا نشانہ بھی بنایا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here