دنیا بھر میں پاکستان کی منفرد پہچان

0
1260

پاکستان جس خطے میں واقع ہے یہ منفرد شناخت اور ثقافت رکھتا ہے۔یہاں کے لوک گیت، لباس ،زبان اور کھانوں سمیت سارا طرزِ حیات انفرادیت کا حامل ہے۔

وہیں پاکستان کو الگ پہچان اور شہرت دینے والا فن ’پاکستانی ٹرک آرٹ‘ دنیا بھر میں خوب نام پیدا کر رہا ہے جس سے پاکستان کا ایک مثبت اور خوب صورت چہرہ دنیا بھر میں روشناس ہو رہا ہے۔

پاکستانی ٹرک آرٹ سے تیار کئے گئے رنگ برنگے خوب صورت ڈیزائنوں، پھول پتیوں اور مختلف نقش و نگار سے مزین یہ دیوہیکل ٹرک جب ملکی سرحدوں کے باہر لمبی مسافتوں پر نکلتے ہیں تو ‘ٹرک آرٹ’ کو دیکھ کر باآسانی پاکستانی آرٹ کو پہچانا جاتا ہے۔

​اس سے پہلے یہ کام گھوڑا گاڑی اور اونٹ گاڑیوں پر ہوا کرتا تھا۔
پھر جب ٹرک آئے تو ٹرک پر رنگ و روغن کا کام ہونے لگا اور پھول پتیاں غرض کہ ہر قسم کے ڈیزائن، انسانی شکلیں اور مختلف تحریروں پر مبنی مختلف رنگوں کا استعمال کرکے یہ آرٹ ‘ٹرک آرٹ’ کی صورت میں ڈھل گیا۔
ایک ٹرک کو تیار کرنے میں ہزاروں بلکہ لاکھوں روپے لگ جاتے ہیں باقی ٹرک کے سائز اور کام پر منحصر ہے۔
جبکہ برانڈ نیو ٹرک تیار کرنے پر لاکھوں روپے خرچہ آتا ہے۔
ایک ٹرک کی تیاری میں ایک سے دو ماہ کا وقت درکار ہوتا ہے جس میں دس سے بارہ مزدور کام کرتے ہیں۔
ٹرک آرٹ کی محنت سے پرانے سے پرانے ٹرک کو بھی ایسے خوبصورتی سے سجایا جاتا ہے کہ یہ تمام ٹرک نئے جیسے معلوم ہوتے ہیں۔

پاکستان کی ’ٹرک آرٹ‘ کی دنیا کے کئی ممالک میں نمائش ہو چکی ہے۔ پاکستانی ٹرکوں پر نفیس اور انتہائی دیدہ زیب پھول، اسلامی طرز کی مصوری، فنکاروں، سیاست دانوں یا پھر جانوروں کی تصاویر اور ہمالیہ کے پہاڑی سلسلوں کی انتہائی خوبصورت مصوری دیکھنے کو ملتی ہے۔

کراچی میں ٹرک تیار کرنے کے آرڈرز مختلف شہروں اور صوبوں سے بھی آتے ہیں جس میں آزاد کشمیر، بلوچستان، اندرونِ سندھ اور پنجاب وغیرہ شامل ہیں۔

ایک مکمل ٹرک آرٹسٹ بننے میں کم از کم 4 سال کا عرصہ لگتا ہے۔

آرٹسٹ حیدر علی بتاتے ہیں کہ، ’پاکستان میں اسے فن نہیں مانا جاتا جبکہ لندن اولمپک گیمز میں ہم نے پاکستانی ٹرک آرٹ کو پیش کرکے کافی شہرت پائی جبکہ کینیڈا، استنبول، ترکی، انقرہ، اور بھارت میں بھی اسے متعارف کروایا ہے‘۔
ان کا کہنا تھاکہ گزشتہ سال بھارت کے شہر کلکلتہ میں سب سے بڑے تہوار درگا پوجا کے موقع پر ٹرک آرٹ کے مقابلے میں پاکستان نے پہلا انعام جیتا تھا​۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here